کشتی رواں دواں تھی سمندر کھلا ہوا

شاہد ماہلی

کشتی رواں دواں تھی سمندر کھلا ہوا

شاہد ماہلی

MORE BYشاہد ماہلی

    کشتی رواں دواں تھی سمندر کھلا ہوا

    آنکھوں میں بس گیا ہے وہ منظر کھلا ہوا

    بستر تھا ایک جسم تھے دو خواہشیں ہزار

    دونوں کے درمیان تھا خنجر کھلا ہوا

    الجھا ہی جا رہا ہوں میں گلیوں کے جال میں

    کب سے ہے انتظار میں اک گھر کھلا ہوا

    اک حرف مدعا تھا سو وہ بھی دبی زبان

    الزام دے رہا ہے ستم گر کھلا ہوا

    صحرا نورد شہر کی سڑکوں پر آ گئے

    چہرے پہ گرد آبلہ پا سر کھلا ہوا

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY