کشتیاں ڈوب رہی ہیں کوئی ساحل لاؤ

جمنا پرشاد راہیؔ

کشتیاں ڈوب رہی ہیں کوئی ساحل لاؤ

جمنا پرشاد راہیؔ

MORE BYجمنا پرشاد راہیؔ

    کشتیاں ڈوب رہی ہیں کوئی ساحل لاؤ

    اپنی آنکھیں مری آنکھوں کے مقابل لاؤ

    پھول کاغذ کے ہیں اب کانچ کے گل دانوں میں

    تم بھی بازار سے پتھر کے عنادل لاؤ

    ایک آواز ابھرتی ہے پس منظر خوں

    اے اجالو مری تصویر کا قاتل لاؤ

    مڑ کے دیکھو گے تو پتھر سے بدل جاؤ گے

    اب تصور میں نہ چھوڑی ہوئی منزل لاؤ

    روشنی ہے مری ویران نگاہی کا سبب

    اب نہ چہرہ کوئی سورج کے مماثل لاؤ

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    کشتیاں ڈوب رہی ہیں کوئی ساحل لاؤ نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY