کٹ گئی بے مدعا ساری کی ساری زندگی

غلام بھیک نیرنگ

کٹ گئی بے مدعا ساری کی ساری زندگی

غلام بھیک نیرنگ

MORE BYغلام بھیک نیرنگ

    کٹ گئی بے مدعا ساری کی ساری زندگی

    زندگی سی زندگی ہے یہ ہماری زندگی

    کیا ارادوں سے ہے حاصل؟ طاقت و فرصت کہاں

    ہائے کہلاتی ہے کیوں بے اختیاری زندگی

    اے سر شوریدہ اب تیرے وہ سودا کیا ہوئے!

    کیا سدا سے تھی یہی غفلت شعاری زندگی

    درد الفت کا نہ ہو تو زندگی کا کیا مزا

    آہ و زاری زندگی ہے بے قراری زندگی

    آرزوئے زیست بھی یاں یاں آرزوئے دید ہے

    تو نہ پیارا ہو تو مجھ کو ہو نہ پیاری زندگی

    اور مرجھائے گی تیری چھیڑ سے دل کی کلی

    کر نہ دوبھر مجھ پہ اے باد بہاری زندگی

    یاں تو اے نیرنگؔ دونوں کے لیے ساماں نہیں

    موت بھی مجھ پر گراں ہے گر ہے بھاری زندگی

    مأخذ :
    • کتاب : Jadeed Shora-e-Urdu (Pg. 387)
    • Author : Dr. Abdul Wahid
    • مطبع : Feroz sons Printers Publishers and Stationers

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY