کٹا نہ کوہ الم ہم سے کوہ کن کی طرح

اطہر نادر

کٹا نہ کوہ الم ہم سے کوہ کن کی طرح

اطہر نادر

MORE BYاطہر نادر

    کٹا نہ کوہ الم ہم سے کوہ کن کی طرح

    بدل سکا نہ زمانہ ترے چلن کی طرح

    ہزار بار کیا خون آرزو ہم نے

    جبین دہر پہ پھر بھی رہے شکن کی طرح

    سواد شب کی یہ تنہائیاں بھی ڈستی ہیں

    یہ چاندنی بھی نظر آتی ہے کفن کی طرح

    تمام شہر ہے بیگانہ لوگ نا مانوس

    وطن میں اپنے ہیں ہم ایک بے وطن کی طرح

    خیال دوست نہ حسرت نہ آرزو نہ امید

    یہ دل ہے اب کسی اجڑے ہوئے چمن کی طرح

    سکون قلب تو کیا ہے قرار جاں بھی لٹا

    تمہاری یاد بھی آئی تو راہزن کی طرح

    عجب نہیں کہ سر شہر آرزو نادرؔ

    ہمارا دل بھی جلے شمع انجمن کی طرح

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY