کترا کے گلستاں سے جو سوئے قفس چلے

وحید اختر

کترا کے گلستاں سے جو سوئے قفس چلے

وحید اختر

MORE BYوحید اختر

    کترا کے گلستاں سے جو سوئے قفس چلے

    ایسی کوئی ہوا بھی تو اب کے برس چلے

    آداب قافلہ بھی ہیں زنجیر پائے شوق

    یہ کیا سفر اسیر صدائے جرس چلے

    مانا ہوائے گل سے تھے بے اختیار ہم

    پھر بھی بچا کے راہ کا ہر خار و خس چلے

    پامال ہو کے رہ گئے جشن بہار میں

    یہ فکر تھی چمن پہ خزاں کا نہ بس چلے

    اے چشمۂ حیات نہ دی تو نے بوند بھی

    ہم تشنہ کام ابر کی صورت برس چلے

    صبحیں بھی آ کے زہر رگ جاں میں بھر نہ دیں

    ہجران یار تیرے اندھیرے تو ڈس چلے

    ان کی یہ ضد وہ دیکھیں گدائے‌ رفو ہمیں

    ہم کو یہ فکر ان کے گریباں پہ بس چلے

    تھا پاس آبروئے‌ تمنا ہمیں وحیدؔ

    چن کر گل مراد سب اہل ہوس چلے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY