کٹتے ہی سنگ لفظ گرانی نکل پڑے

اقبال ساجد

کٹتے ہی سنگ لفظ گرانی نکل پڑے

اقبال ساجد

MORE BY اقبال ساجد

    کٹتے ہی سنگ لفظ گرانی نکل پڑے

    شیشہ اٹھا کہ جوئے معانی نکل پڑے

    پیاسو رہو نہ دشت میں بارش کے منتظر

    مارو زمیں پہ پاؤں کہ پانی نکل پڑے

    مجھ کو ہے موج موج گرہ باندھنے کا شوق

    پھر شہر کی طرف نہ روانی نکل پڑے

    ہوتے ہی شام جلنے لگا یاد کا الاؤ

    آنسو سنانے دکھ کی کہانی نکل پڑے

    ساجدؔ تو پھر سے خانۂ دل میں تلاش کر

    ممکن ہے کوئی یاد پرانی نکل پڑے

    مآخذ:

    • Book : kulliyat-e-iqbaal saajid (Pg. 153)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY