کون سی وہ شمع تھی جس کا میں پروانہ ہوا

پنڈت جگموہن ناتھ رینا شوق

کون سی وہ شمع تھی جس کا میں پروانہ ہوا

پنڈت جگموہن ناتھ رینا شوق

MORE BYپنڈت جگموہن ناتھ رینا شوق

    کون سی وہ شمع تھی جس کا میں پروانہ ہوا

    اور پھر لو بھی لگی ایسی کہ دیوانہ ہوا

    ساقیٔ سر مست سے جب تک کہ لینے کو بڑھوں

    ہاتھ سے گرتے ہی چکنا چور پیمانہ ہوا

    دل حریم ناز سے لے کر تو ہم نکلے مگر

    ہو گیا عالم کچھ ایسا سب سے بیگانہ ہوا

    خیر تھی الفت میں دل نے رنگ کچھ بدلا نہ تھا

    اب تماشہ دیکھئے گا وہ بھی دیوانہ ہوا

    ہم نے جانے کیا کہا لوگوں نے کیا سمجھا اسے

    سرگزشت درد دل تھی جس کا افسانہ ہوا

    فیض ساقی نے بدل دی صورت دل اور ہی

    پہلے پیمانہ تھا پیمانہ سے مے خانہ ہوا

    میرے لب تک آتے آتے کیوں چھلک جاتا ہے شوقؔ

    جام رنگیں ساغر مل یا کہ پیمانہ ہوا

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY