خاک نیند آئے اگر دیدۂ بیدار ملے

ساقی فاروقی

خاک نیند آئے اگر دیدۂ بیدار ملے

ساقی فاروقی

MORE BY ساقی فاروقی

    خاک نیند آئے اگر دیدۂ بیدار ملے

    اس خرابے میں کہاں خواب کے آثار ملے

    اس کے لہجے میں قیامت کی فسوں کاری تھی

    لوگ آواز کی لذت میں گرفتار ملے

    اس کی آنکھوں میں محبت کے دیے جلتے رہیں

    اور پندار میں انکار کی دیوار ملے

    میرے اندر اسے کھونے کی تمنا کیوں ہے

    جس کے ملنے سے مری ذات کو اظہار ملے

    روح میں رینگتی رہتی ہے گنہ کی خواہش

    اس امربیل کو اک دن کوئی دیوار ملے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    خاک نیند آئے اگر دیدۂ بیدار ملے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites