خاکساری سے جو غافل دل غماز ہوا

منیرؔ  شکوہ آبادی

خاکساری سے جو غافل دل غماز ہوا

منیرؔ  شکوہ آبادی

MORE BYمنیرؔ  شکوہ آبادی

    خاکساری سے جو غافل دل غماز ہوا

    خاک کے پردے میں پوشیدہ مرا راز ہوا

    لے گیا خط جو کبوتر کی طرح طائر دل

    زلف کے جال میں پھنستے ہی گرہ باز ہوا

    ساز کے پردے میں کی تو نے حکومت سب پر

    نئے قانون سے تیار ترا ساز ہوا

    حیرتی فصل چمن میں ہوئی سرسبز ایسی

    سبزہ رخسارۂ تصویر سے آغاز ہوا

    رات شرما کے ترے بالوں سے روپوش ہوئی

    زاغ شب کے لئے گیسو پر پرواز ہوا

    کوٹھے پر چہرۂ پر نور دکھایا سر شام

    یار سے رجعت خورشید کا اعجاز ہوا

    چمن دہر میں تھے دیدۂ عنقا نرگس

    جب سے میں شیفتۂ چشم فسوں ساز ہوا

    صفت آبلہ مینائے فلک ٹوٹ گیا

    کیا قیامت تری رفتار کا انداز ہوا

    جب ہوا محو ادا باغ میں وہ خسرو حسن

    پھولوں کے عکس سے گلگوں فرس ناز ہوا

    آپ منہ دیکھنے کو آئینۂ دل مانگا

    تصفیہ اس بت کافر سے خدا ساز ہوا

    عرصۂ دہر میں باندھا جو طلسم الفت

    دشمن جاں فلک شعبدہ پرداز ہوا

    جان لیتا ہے تری تیر نگہ سے سب کی

    اے پری پیک قضا بھی قدر انداز ہوا

    سنبل آہ ہوا طرۂ شمشاد بہشت

    ہم بغل مجھ سے جو وہ سرو سرافراز ہوا

    اس سے کچھ کہہ کے مجھے ذبح کیا باتوں میں

    تیز تر تیغ اجل سے لب غماز ہوا

    لوگ کرتے ہیں کمال رخ زیبا کا وصف

    خلق کو یاد ترا مصحف اعجاز ہوا

    اے مغنی دل ناداں نکل آیا باہر

    آج بے پردہ زمانہ میں ترا ساز ہوا

    روز فرقت نے کیا طائر دل کو ہیجان

    گل خورشید مجھے جنگل شہباز ہوا

    بوسہ مانگا نہ گیا ہونٹوں کا اے رشک پری

    رنگ مسی کا مجھے سرمۂ آواز ہوا

    نشۂ غمزہ و انداز سے سرشار ہوں میں

    کاسۂ عمر رواں جام مے ناز ہوا

    تر دماغی جو بڑھے نشۂ معنی کی منیرؔ

    کاسۂ سر مجھے جام مے شیراز ہوا

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY