خاموش کلی سارے گلستاں کی زباں ہے

عبدالعزیز فطرت

خاموش کلی سارے گلستاں کی زباں ہے

عبدالعزیز فطرت

MORE BYعبدالعزیز فطرت

    خاموش کلی سارے گلستاں کی زباں ہے

    یہ طرز سخن آبروئے خوش سخناں ہے

    جو بات کہ خود میرے تکلم پہ گراں ہے

    وہ تیری سماعت کے تو قابل ہی کہاں ہے

    ہر ذرہ پہ ہے منزل محبوب کا دھوکا

    پہنچے کوئی اس بزم تک ان کا ہی کہاں ہے

    انسان نے اسرار جہاں فاش کیے ہیں

    سویا ہوا خورشید ہے ذرہ نگراں ہے

    فطرتؔ دل کونین کی دھڑکن تو ذرا سن

    یہ حضرت انساں ہی کی عظمت کا بیاں ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY