خانقاہ میں صوفی منہ چھپائے بیٹھا ہے

کیف بھوپالی

خانقاہ میں صوفی منہ چھپائے بیٹھا ہے

کیف بھوپالی

MORE BY کیف بھوپالی

    خانقاہ میں صوفی منہ چھپائے بیٹھا ہے

    غالباً زمانے سے مات کھائے بیٹھا ہے

    قتل تو نہیں بدلا قتل کی ادا بدلی

    تیر کی جگہ قاتل ساز اٹھائے بیٹھا ہے

    ان کے چاہنے والے دھوپ دھوپ پھرتے ہیں

    غیر ان کے کوچے میں سائے سائے بیٹھا ہے

    وائے عاشق ناداں کائنات یہ تیری

    اک شکستہ شیشے کو دل بنائے بیٹھا ہے

    دور بارش اے گلچیں وا ہے دیدۂ نرگس

    آج ہر گل نرگس خار کھائے بیٹھا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites