خیر سے دل کو تری یاد سے کچھ کام تو ہے

حسن نعیم

خیر سے دل کو تری یاد سے کچھ کام تو ہے

حسن نعیم

MORE BYحسن نعیم

    خیر سے دل کو تری یاد سے کچھ کام تو ہے

    وصل کی شب نہ سہی ہجر کا ہنگام تو ہے

    نور افلاک سے روشن ہو شب غم کہ نہ ہو

    چاند تاروں سے مرا نامہ و پیغام تو ہے

    کم نہیں اے دل بیتاب متاع امید

    دست مے خوار میں خالی ہی سہی جام تو ہے

    بام خورشید سے اترے کہ نہ اترے کوئی صبح

    خیمۂ شب میں بہت دیر سے کہرام تو ہے

    جو بھی الزام مرے عشق پہ آیا ہو نعیمؔ

    ان سے وابستہ کسی طور مرا نام تو ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    خیر سے دل کو تری یاد سے کچھ کام تو ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY