خلش نہاں کی وہ لذتیں تمہیں یاد ہوں کہ نہ یاد ہوں

شارق میرٹھی

خلش نہاں کی وہ لذتیں تمہیں یاد ہوں کہ نہ یاد ہوں

شارق میرٹھی

MORE BYشارق میرٹھی

    خلش نہاں کی وہ لذتیں تمہیں یاد ہوں کہ نہ یاد ہوں

    وہ نفس نفس میں قیامتیں تمہیں یاد ہوں کہ نہ یاد ہوں

    کبھی قربتوں میں یہ دوریاں کہ زبان دل کی نہ کہہ سکے

    کبھی دوریوں میں بھی قربتیں تمہیں یاد ہوں کہ نہ یاد ہوں

    وہ جنون شوق کی مستیاں وہ نیاز و ناز کی گرمیاں

    وہ نظر نظر میں حکایتیں تمہیں یاد ہوں کہ نہ یاد ہوں

    کبھی شکوہائے عتاب میں بھی ہزار شکر کی جھلکیاں

    کبھی شکر میں بھی شکایتیں تمہیں یاد ہوں کہ نہ یاد ہوں

    وہ تمہارا شارقؔ بے نوا کہ نہیں ہے جس کا کوئی یہاں

    وہ وفا کی اس کی حکایتیں تمہیں یاد ہوں کہ نہ یاد ہوں

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY