خلوت جاں میں ترا درد بسانا چاہے

حنیف اخگر

خلوت جاں میں ترا درد بسانا چاہے

حنیف اخگر

MORE BYحنیف اخگر

    خلوت جاں میں ترا درد بسانا چاہے

    دل سمندر میں بھی دیوار اٹھانا چاہے

    پردہ داری یہ محبت کو نبھانا چاہے

    دل میں چھپ کر وہ کہاں سامنے آنا چاہے

    اس کے دامن پہ بکھر جائے ستاروں کی طرح

    خامشی حال اگر اپنا سنانا چاہے

    اس سے کیا کوئی کرے آگ بجھانے کا سوال

    وہ تو جذبات میں بس آگ لگانا چاہے

    حسن برہم کہ منانے کو ہے صدیاں درکار

    روز اک ترک تعلق کا بہانہ چاہے

    عشق کو فرش بھی کانٹوں کا گوارا ہے مگر

    حسن ہر حال میں ایک آئینہ خانہ چاہے

    بن گیا میری محبت کا حریف اے اخگرؔ

    میں جسے چاہوں اسی کو یہ زمانہ چاہے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    حنیف اخگر

    حنیف اخگر

    حنیف اخگر

    حنیف اخگر

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY