کھٹک نے دل کی دیا زخم بے نشاں کا پتا

بیتاب عظیم آبادی

کھٹک نے دل کی دیا زخم بے نشاں کا پتا

بیتاب عظیم آبادی

MORE BYبیتاب عظیم آبادی

    کھٹک نے دل کی دیا زخم بے نشاں کا پتا

    نہ اس دہن میں فغاں تھی نہ تھا زباں کا پتا

    سر نیاز جھکانے کی خو تو پیدا کر

    جبین شوق لگا لے گی آستاں کا پتا

    ستم دبا نہ سکا آپ کے شہیدوں کو

    جفا مٹا نہ سکی خون بے کساں کا پتا

    رگ بریدہ پکارے گی نام قاتل کا

    کفن بتائے گا اس تیغ خوں چکاں کا پتا

    اسی قدر تو ہے سرمایۂ تجسس عقل

    کہ کچھ زمیں کی خبر ہے کچھ آسماں کا پتا

    دل تپاں تھا کہیں چشم خونفشاں تھی کہیں

    قدم قدم پہ ملا کوچۂ بتاں کا پتا

    اسیر دام محبت سے پوچھئے بیتابؔ

    کمند طرۂ مشکین دلستاں کا پتا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY