خیال یار جب آتا ہے بیتابانہ آتا ہے

جگن ناتھ آزاد

خیال یار جب آتا ہے بیتابانہ آتا ہے

جگن ناتھ آزاد

MORE BYجگن ناتھ آزاد

    خیال یار جب آتا ہے بیتابانہ آتا ہے

    کہ جیسے شمع کی جانب کوئی پروانہ آتا ہے

    تصور اس طرح آتا ہے تیرا محفل دل میں

    مرے ہاتھوں میں جیسے خود بہ خود پیمانہ آتا ہے

    خرد والو خبر بھی ہے کبھی ایسا بھی ہوتا ہے

    جنوں کی جستجو میں آپ ہی ویرانہ آتا ہے

    کبھی قصد حرم کو جب قدم اپنا اٹھاتا ہوں

    مرے ہر اک قدم پر اک نیا بت خانہ آتا ہے

    در جاناں سے آتا ہوں تو لوگ آپس میں کہتے ہیں

    فقیر آتا ہے اور با شوکت شاہانہ آتا ہے

    دکن کی ہیر سے آزادؔ کوئی جا کے یہ کہہ دے

    کہ رانجھے کے وطن سے آج اک دیوانہ آتا ہے

    وہی ذکر دکن ہے اور وہی فرقت کی باتیں ہیں

    تجھے آزادؔ کوئی اور بھی افسانہ آتا ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    خیال یار جب آتا ہے بیتابانہ آتا ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY