خیال و خواب ہوا برگ و بار کا موسم

پروین شاکر

خیال و خواب ہوا برگ و بار کا موسم

پروین شاکر

MORE BY پروین شاکر

    خیال و خواب ہوا برگ و بار کا موسم

    بچھڑ گیا تری صورت بہار کا موسم

    کئی رتوں سے مرے نیم وا دریچوں میں

    ٹھہر گیا ہے ترے انتظار کا موسم

    وہ نرم لہجے میں کچھ تو کہے کہ لوٹ آئے

    سماعتوں کی زمیں پر پھوار کا موسم

    پیام آیا ہے پھر ایک سرو قامت کا

    مرے وجود کو کھینچے ہے دار کا موسم

    وہ آگ ہے کہ مری پور پور جلتی ہے

    مرے بدن کو ملا ہے چنار کا موسم

    رفاقتوں کے نئے خواب خوش نما ہیں مگر

    گزر چکا ہے ترے اعتبار کا موسم

    ہوا چلی تو نئی بارشیں بھی ساتھ آئیں

    زمیں کے چہرے پہ آیا نکھار کا موسم

    وہ میرا نام لیے جائے اور میں اس کا نام

    لہو میں گونج رہا ہے پکار کا موسم

    قدم رکھے مری خوشبو کہ گھر کو لوٹ آئے

    کوئی بتائے مجھے کوئے یار کا موسم

    وہ روز آ کے مجھے اپنا پیار پہنائے

    مرا غرور ہے بیلے کے ہار کا موسم

    ترے طریق محبت پہ بارہا سوچا

    یہ جبر تھا کہ ترے اختیار کا موسم

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    پروین شاکر

    پروین شاکر

    مآخذ:

    • Book: Mah-e-tamam (Kulliyat),(khushboo) (Pg. 115)
    • Author: Parveen shakir
    • مطبع: Educational publishing house (2008)
    • اشاعت: 2008

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites