خزانۂ زر و گوہر پہ خاک ڈال کے رکھ

افتخار عارف

خزانۂ زر و گوہر پہ خاک ڈال کے رکھ

افتخار عارف

MORE BY افتخار عارف

    خزانۂ زر و گوہر پہ خاک ڈال کے رکھ

    ہم اہل مہر و محبت ہیں دل نکال کے رکھ

    ہمیں تو اپنے سمندر کی ریت کافی ہے

    تو اپنے چشمۂ بے فیض کو سنبھال کے رکھ

    ذرا سی دیر کا ہے یہ عروج مال و منال

    ابھی سے ذہن میں سب زاویے زوال کے رکھ

    یہ بار بار کنارے پہ کس کو دیکھتا ہے

    بھنور کے بیچ کوئی حوصلہ اچھال کے رکھ

    نہ جانے کب تجھے جنگل میں رات پڑ جائے

    خود اپنی آگ سے شعلہ کوئی اجال کے رکھ

    جواب آئے نہ آئے سوال اٹھا تو سہی

    پھر اس سوال میں پہلو نئے سوال کے رکھ

    تری بلا سے گروہ جنوں پہ کیا گزری

    تو اپنا دفتر سود و زیاں سنبھال کے رکھ

    چھلک رہا ہے جو کشکول آرزو اس میں

    کسی فقیر کے قدموں کی خاک ڈال کے رکھ

    مآخذ:

    • کتاب : Mahr-e-Do neem (Pg. 35)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY