کھیل دونوں کا چلے تین کا دانہ نہ پڑے

عمیر نجمی

کھیل دونوں کا چلے تین کا دانہ نہ پڑے

عمیر نجمی

MORE BYعمیر نجمی

    کھیل دونوں کا چلے تین کا دانہ نہ پڑے

    سیڑھیاں آتی رہیں سانپ کا خانہ نہ پڑے

    دیکھ معمار پرندے بھی رہیں گھر بھی بنے

    نقشہ ایسا ہو کوئی پیڑ گرانا نہ پڑے

    میرے ہونٹوں پہ کسی لمس کی خواہش ہے شدید

    ایسا کچھ کر مجھے سگریٹ کو جلانا نہ پڑے

    اس تعلق سے نکلنے کا کوئی راستہ دے

    اس پہاڑی پہ بھی بارود لگانا نہ پڑے

    نم کی ترسیل سے آنکھوں کی حرارت کم ہو

    سرد خانوں میں کوئی خواب پرانا نہ پڑے

    ربط کی خیر ہے بس تیری انا بچ جائے

    اس طرح جا کہ تجھے لوٹ کے آنا نہ پڑے

    ہجر ایسا ہو کہ چہرے پہ نظر آ جائے

    زخم ایسا ہو کہ دکھ جائے دکھانا نہ پڑے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY