کھڑکی دروازہ کھولو

صالح ندیم

کھڑکی دروازہ کھولو

صالح ندیم

MORE BYصالح ندیم

    کھڑکی دروازہ کھولو

    جو بھی کہنا ہے کہہ دو

    آڑی ترچھی ایک لکیر

    دیکھو سوچو اور سمجھو

    پیروں کی بیڑی کھنکی

    سناٹو تم بھی بولو

    کیسی خوشیاں کیسے غم

    پتو ٹوٹو اور بکھرو

    دل بدلا شکلیں بدلیں

    تم بھی بدلو آئینو

    انسانوں کی بستی ہے

    اس جنگل میں کیوں ٹھہرو

    گزرے دنوں کو یاد نہ کر

    مردہ لوگوں پر مت رو

    لوٹ گئیں سب آوازیں

    تم بھی اپنے گھر جاؤ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY