خراماں شاہد سیمیں بدن ہے

رام کرشن مضطر

خراماں شاہد سیمیں بدن ہے

رام کرشن مضطر

MORE BYرام کرشن مضطر

    خراماں شاہد سیمیں بدن ہے

    قیامت آسمانی پیرہن ہے

    تبسم ہے کہ موج نور و نکہت

    نظر ہے یا محبت کی کرن ہے

    مری مستی کا اندازہ ہے کس کو

    نگاہ ناز میری ہم سخن ہے

    وہ میری زندگی پر حکمراں ہیں

    مرے بس میں نہ یہ تن ہے نہ من ہے

    ہزاروں رنگ ہیں میری نظر میں

    تصور میں کسی کی انجمن ہے

    خیالوں میں مرے لہرا رہی ہیں

    وہ زلفیں جن میں بوئے یاسمن ہے

    ابھی اس میں خزاں آنے نہ پائے

    یہ نو رس آرزوؤں کا چمن ہے

    کہاں اب وہ مذاق سرفروشی

    زباں پر قصۂ دار و رسن ہے

    نہیں بدلے ترے مضطرؔ کے انداز

    وہی مستی وہی دیوانہ پن ہے

    مآخذ
    • Raqs-e-bahar

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY