خزاں تجھ پر یہ کیسا برگ و بار آنے لگا ہے

محمد اظہار الحق

خزاں تجھ پر یہ کیسا برگ و بار آنے لگا ہے

محمد اظہار الحق

MORE BYمحمد اظہار الحق

    خزاں تجھ پر یہ کیسا برگ و بار آنے لگا ہے

    مجھے اب موسموں پر اعتبار آنے لگا ہے

    کہاں دوپہر کی حدت کہاں ٹھنڈک شفق کی

    سیہ ریشم میں چاندی کا غبار آنے لگا ہے

    کھلیں گے وصل کے در دوسری دنیاؤں میں بھی

    بالآخر ہجر کے رخ پر نکھار آنے لگا ہے

    مرے اسباب میں مشکیزہ و خورجین رکھنا

    سفر کی شام ہے اور ریگزار آنے لگا ہے

    فلک کو بار بار اہل زمیں یوں دیکھتے ہیں

    کہ جیسے غیب سے کوئی سوار آنے لگا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY