خود کو کسی کی راہ گزر کس لیے کریں

اطہر ناسک

خود کو کسی کی راہ گزر کس لیے کریں

اطہر ناسک

MORE BYاطہر ناسک

    خود کو کسی کی راہ گزر کس لیے کریں

    تو ہم سفر نہیں تو سفر کس لیے کریں

    جب تو نے ہی نگاہ میں رکھا نہیں ہمیں

    اب اور کسی کی روح میں گھر کس لیے کریں

    کیوں چھوڑ دیں نہ شام سے پہلے ہی تیرا شہر

    تجھ سے بچھڑ کے رات بسر کس لیے کریں

    منسوب جاں ہو اور کوئی پیکر جمال

    کر سکتے ہیں یہ کام مگر کس لیے کریں

    کس کے لیے چراغ جلائیں تمام رات

    ناسکؔ پھر اہتمام‌ سحر کس لیے کریں

    مأخذ :
    • کتاب : Adab-o-Saqafat International (Pg. 63)
    • Author : Shakeelsarosh
    • مطبع : Misal Publishers Raheem Center Press Market Ameen Pur Bazar, Faisalbad, Pakistan

    موضوعات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے