خنک جوشی نہ کرتے جوں صبا گر یہ بتاں ہم سے

ولی عزلت

خنک جوشی نہ کرتے جوں صبا گر یہ بتاں ہم سے

ولی عزلت

MORE BYولی عزلت

    خنک جوشی نہ کرتے جوں صبا گر یہ بتاں ہم سے

    تو مثل غنچۂ گل دل نہ جاتا رائیگاں ہم سے

    پھرے اس زلف و رو کے عشق میں دونوں جہاں ہم سے

    ادھر کفار پھر گئے سب ادھر ایمانیاں ہم سے

    عدو تھے مالی اور صیاد گلچیں نے قیامت کی

    خدا لعنت کرے تینوں پہ چھوٹا گلستاں ہم سے

    اجاڑا گریہ‌‌ و شور جنوں کے واسطے ہم کو

    ولے گلشن کو اور آب و نمک تھا باغباں ہم سے

    ہمیں تو راستی جوں تیر ہرگز راس آئی نیں

    ہمیشہ ٹیڑھے ہی رہتے ہیں یہ ابرو کماں ہم سے

    عقب یاروں کے سر پر خاک کرتے ہم بھی جاتے ہیں

    رہا جاتا نہیں جوں گرد راہ کارواں ہم سے

    ہمیں طفلاں تو پتھروں کی محبت سے نہ بھولیں گے

    چلے صحرا کو ہم پھر گئے بلا سے شہریاں ہم سے

    ہمیں ٹک ذبح کر لے سایۂ گلبن میں جیتا رہ

    چھڑایا تو نے گر صیاد گل کا آستاں ہم سے

    مزے میں درد سر کے کب سے محتاج دوا عزلتؔ

    عبث اے صندلی رنگو ہوئے ہو سرگراں ہم سے

    مآخذ :
    • Deewan-e-uzlat(Rekhta Website)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY