خورشید فراق میں تپاں ہے

امداد علی بحر

خورشید فراق میں تپاں ہے

امداد علی بحر

MORE BYامداد علی بحر

    خورشید فراق میں تپاں ہے

    اے ذرہ نواز تو کہاں ہے

    کیوں روتے ہیں دیکھ دیکھ کر ہم

    یہ زلف سیہ ہے یا دھواں ہے

    منہ دیکھ رہا ہوں اور چپ ہوں

    کیا بات کروں وہ بد زباں ہے

    اب منت باغباں عبث ہے

    پت جھڑ کے دن آ گئے خزاں ہے

    گلزار نہیں مقام عشرت

    بلبل پہ جفائے باغباں ہے

    گل کو بھی ہی کچھ غم نہاں نے

    غنچے کی چٹک نہیں فغاں ہے

    گردوں نے ہی سب کو مار رکھا

    جو زندہ بھی ہے وہ نیم جاں ہے

    یہ کاہکشاں نہیں سروں پر

    کھینچے ہوئے تیغ آسماں ہے

    کیا قیس سے ملتفت ہو لیلیٰ

    ننگا ہے وہ ننگ خانداں ہے

    پروانے سے شمع کیا چھپے گی

    میں بھی پوچھوں گا تو جہاں ہے

    دیکھا اے بحرؔ تیرا دیوان

    اک دفتر حال عاشقاں ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY