خورشید رخوں کا سامنا ہے

امداد علی بحر

خورشید رخوں کا سامنا ہے

امداد علی بحر

MORE BYامداد علی بحر

    خورشید رخوں کا سامنا ہے

    شبنم صفت آبرو ہوا ہے

    دل زخمیٔ عشق ہے سزا ہے

    بھر دوں جو نمک تو پھر مزا ہے

    اب تو دل اس پر آ گیا ہے

    اچھا ہے برا ہے یا بھلا ہے

    بین‌ العد میں آدمی ہے

    دنیا ایک بیچ کی سرا ہے

    ایسی ہے ملاحت اس کے منہ پر

    رخسار کا سبزہ لو نیا ہے

    اکسیر ہے دل کی خاکساری

    کشتہ ہو جو نفس کیمیا ہے

    منعم نہ کر اعتبار دولت

    اقبال کا قلب لا بقا ہے

    وہ دل نہ رہا جا ناز اٹھاؤں

    میں بھی ہوں خفا جو وہ خفا ہے

    کم ہے جو ستم ہو تجھ پر اے دل

    بے رحم سے اور مل سزا ہے

    دل تم کو تو پھر کسی دن

    پیار کوئی تم سے بھی سوا ہے

    اچھی نہیں یہ خلش رقیبو

    کانٹے بو کر کوئی پھلا ہے

    ہم دیکھیں مزے رقیب لوٹے

    یوں اس سے بھی تو کیا مزا ہے

    دم سینے سے کیوں نہیں نکلتا

    کیا جسم نزار خار پا ہے

    دولت سے کبھی نہ سیر ہوں گے

    شاہوں کو فقیر کی دعا ہے

    چھپتا نہیں کوئی اپنے دل میں

    آنکھوں میں وہی کھٹک رہا ہے

    اس رنج میں بھی نباہ دیں گے

    اپنا ابھی اتنا حوصلہ ہے

    اے بحرؔ غزل کہی جو تم نے

    یہ طرز کلام میرؔ کا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY