خوشبو سا بدن یاد نہ سانسوں کی ہوا یاد

فرحت عباس شاہ

خوشبو سا بدن یاد نہ سانسوں کی ہوا یاد

فرحت عباس شاہ

MORE BY فرحت عباس شاہ

    خوشبو سا بدن یاد نہ سانسوں کی ہوا یاد

    اجڑے ہوئے باغوں کو کہاں باد صبا یاد

    آتی ہے پریشانی تو آتا ہے خدا یاد

    ورنہ نہیں دنیا میں کوئی تیرے سوا یاد

    جو بھولے سے بھولے ہیں مگر تیرے علاوہ

    اک بچھڑا ہوا دل ہمیں آتا ہے سدا یاد

    میں تو ہوں اب اک عمر سے پچھتاووں کی زد میں

    کیا تم کو بھی آتی ہے کبھی اپنی خطا یاد

    ممکن ہے بھلا کیسے علاج غم جاناں

    جب کوئی دوا یاد نہ ہے کوئی دعا یاد

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY