خوشبو ترے لہجے کی مرے فن میں بسی ہے

عبید الرحمان

خوشبو ترے لہجے کی مرے فن میں بسی ہے

عبید الرحمان

MORE BYعبید الرحمان

    خوشبو ترے لہجے کی مرے فن میں بسی ہے

    اشعار ہیں میرے تری آواز کے سائے

    دادی کی کہانی کو ترستے ہیں یہ بچے

    آنکھوں میں نہیں دور تلک نیند کے سائے

    جب جسم پر یہ جان ہو اک قرض کی صورت

    اللہ کسی دشمن کو بھی یہ دن نہ دکھائے

    پھر تازہ ہواؤں کی پہنچ روح تلک ہو

    پھر پیار کے موسم کی گھٹا لوٹ کے آئے

    خط لکھوں تمہیں یاد کروں ٹھیک ہے لیکن

    کیا ٹھیک مرے دل کو قرار آئے نہ آئے

    مأخذ :
    • کتاب : Aawaz Ke Saye (Poetry) (Pg. 95)
    • Author : Obaidur Rahman
    • مطبع : Sehla Obaid (2001)
    • اشاعت : 2001

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY