خوشی کی آرزو کیا دل میں ٹھہرے

کیف احمد صدیقی

خوشی کی آرزو کیا دل میں ٹھہرے

کیف احمد صدیقی

MORE BYکیف احمد صدیقی

    خوشی کی آرزو کیا دل میں ٹھہرے

    ترے غم نے بٹھا رکھے ہیں پہرے

    کہاں چھوڑ آئی میری تیرہ بختی

    وہ راتیں نور کی وہ دن سنہرے

    مری جانب نہ دیکھو مسکرا کر

    ہوئے جاتے ہیں دل کے زخم گہرے

    نظر پر تیرگی چھائی ہوئی ہے

    مگر آنکھوں میں ہیں سپنے سنہرے

    جدھر بھی دیکھتا ہوں کیفؔ ادھر ہی

    گھرے ہیں غم کے بادل گہرے گہرے

    مآخذ :
    • کتاب : sheerazah (Pg. 105)
    • Author : makhmoor saeedi,Parem Gopal Mittal
    • مطبع : P -K Publication 3072 Partap stareet gola Market -Daryaganj delhi-6 (1973)
    • اشاعت : 1973

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY