خواب ہی خواب کب تلک دیکھوں

عبید اللہ علیم

خواب ہی خواب کب تلک دیکھوں

عبید اللہ علیم

MORE BY عبید اللہ علیم

    خواب ہی خواب کب تلک دیکھوں

    کاش تجھ کو بھی اک جھلک دیکھوں

    چاندنی کا سماں تھا اور ہم تم

    اب ستارے پلک پلک دیکھوں

    جانے تو کس کا ہم سفر ہوگا

    میں تجھے اپنی جاں تلک دیکھوں

    بند کیوں ذات میں رہوں اپنی

    موج بن جاؤں اور چھلک دیکھوں

    صبح میں دیر ہے تو پھر اک بار

    شب کے رخسار سے ڈھلک دیکھوں

    ان کے قدموں تلے فلک اور میں

    صرف پہنائی فلک دیکھوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY