کیجئے نہ اسیری میں اگر ضبط نفس کو

محمد رفیع سودا

کیجئے نہ اسیری میں اگر ضبط نفس کو

محمد رفیع سودا

MORE BYمحمد رفیع سودا

    کیجئے نہ اسیری میں اگر ضبط نفس کو

    دے آگ ابھی شعلۂ آواز قفس کو

    بہہ جاوے لہو ہو کے دل قافلہ سالار

    تعلیم دے نالہ جو مرا بانگ جرس کو

    پہنچے ہے نم داغ جگر تا سر مژگاں

    شاداب میں رکھتا ہوں سدا آگ سے خس کو

    پھرتا ہے ادھر زلف میں شانہ تو ادھر دل

    یہ دزد نہ لایا کبھو خاطر میں عسس کو

    اے عشق نہ فرہاد بچا تجھ سے نہ پرویز

    با خاک برابر تو کیا ناکس و کس کو

    لے سکتے نہیں سانس تری کو کے مقید

    تا خون جگر بیچ نہ غوطہ دیں نفس کو

    ترغیب نہ کر سیر چمن کی ہمیں سوداؔ

    ہر چند ہوا خوب ہے واں لیک ہوس کو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY