کس قیامت کا ہے بازار ترے کوچے میں

آرزو سہارنپوری

کس قیامت کا ہے بازار ترے کوچے میں

آرزو سہارنپوری

MORE BYآرزو سہارنپوری

    کس قیامت کا ہے بازار ترے کوچے میں

    بکنے آتے ہیں خریدار ترے کوچے میں

    تو وہ عیسیٰ ہے کہ اے نبض شناس کونین

    ابن مریم بھی ہے بیمار ترے کوچے میں

    اذن دیدار تو ہے عام مگر کیا کہیے

    چشم بینا بھی ہے بے کار ترے کوچے میں

    جس نے دیکھا ہو نظر بھر کے ترا حسن تمام

    کوئی ایسا بھی ہے اے یار ترے کوچے میں

    آرزوؔ سا کبھی دیکھا ہے کوئی کافر عشق

    یوں تو ہیں سینکڑوں دیں دار ترے کوچے میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY