کس قوت‌ بے درد کا اظہار ہے دنیا

نظیر صدیقی

کس قوت‌ بے درد کا اظہار ہے دنیا

نظیر صدیقی

MORE BYنظیر صدیقی

    کس قوت‌ بے درد کا اظہار ہے دنیا

    ہر دل کو گلا ہے کہ دل آزار ہے دنیا

    لوگ اس کو کہا کرتے ہیں اچھا بھی برا بھی

    کیا خوب کہ دونوں کی سزاوار ہے دنیا

    ملتا ہی نہیں کوئی دل زار کا پرساں

    میرے لیے اک محفل اغیار ہے دنیا

    ہر سنگ میں دنیا کو نظر آتا ہے اک بت

    اور ایسے ہر اک بت کی پرستار ہے دنیا

    یہ حشر یہ ہنگامہ نہیں آج پہ موقوف

    سچ یہ ہے کہ صدیوں ہی سے بیمار ہے دنیا

    نیکی کوئی کرتا ہو تو کروٹ نہیں لیتی

    نیت ہو گناہوں کی تو بیدار ہے دنیا

    کس طرح کریں اس کی محبت پہ بھروسا

    اے دوست قیامت کی اداکار ہے دنیا

    اس طرح بھی دنیا کا گلا کرتے ہیں گویا

    معصوم ہے انسان گنہ گار ہے دنیا

    دنیا میں برا وقت تو آتا ہے سبھی پر

    اب خود ہی برے وقت سے دو چار ہے دنیا

    رہ رہ کے برستی ہیں عداوت کی گھٹائیں

    لگتا ہے کہ گرتی ہوئی دیوار ہے دنیا

    کیا کہئے اسے کچھ بھی سمجھ میں نہیں آتا

    اک وادیٔ پر خار کہ گلزار ہے دنیا

    جنت بھی اسی میں ہے جہنم بھی اسی میں

    گہوارۂ‌ ہر عشرت و آزار ہے دنیا

    ڈوبے ہوئے تاروں کا یہ ماتم نہیں کرتی

    چڑھتے ہوئے سورج کی پرستار ہے دنیا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY