کس شعر میں ثنائے رخ مہ جبیں نہیں

زیبا

کس شعر میں ثنائے رخ مہ جبیں نہیں

زیبا

MORE BYزیبا

    کس شعر میں ثنائے رخ مہ جبیں نہیں

    ہے آسمان حسن غزل کی زمیں نہیں

    کیوں کر کہوں کہ تم سا کوئی نازنیں نہیں

    عاجز کچھ اے حسیں مرا حسن آفریں نہیں

    اک اک سخن پہ کرتے ہیں سو سو نہیں نہیں

    کیا دوسرا جہان میں تم سا حسیں نہیں

    تجھ سا جہاں میں اے یم خوبی حسیں نہیں

    ہے موج بحر حسن یہ چین جبیں نہیں

    اچھی نہیں ہے روز کی اے نازنیں نہیں

    ہاں ہاں پیام وصل پہ کیجئے نہیں نہیں

    کعبہ میں بت کدہ میں نہ دل میں نہ عرش پر

    اے بت کہاں نہاں ہے کہ ملتا کہیں نہیں

    جلوہ ترا کہاں نہیں اے آسمان حسن

    جس جا فلک نہ ہو کوئی ایسی زمیں نہیں

    تنہائی لحد سے نہ گھبرائیں کس طرح

    مونس نہیں شفیق نہیں ہم نشیں نہیں

    پیماں شکن جہاں میں نہ ہوگا حضور سا

    ایفائے وعدہ تم سے اگر ہو یقیں نہیں

    کیا ہم سری کرے گا تری ماہ آسماں

    ابرو نہیں تری سی تری سی جبیں نہیں

    موجود جسم میں ہے پر آنکھوں سے ہے نہاں

    تار نگاہ ہے کمر نازنیں نہیں

    رو رو کے حال عشق جو کہتا ہوں ان سے میں

    ہنس ہنس کے مجھ سے کہتے ہیں ہم کو یقیں نہیں

    کس دن انہوں نے سیدھی طرح ہم سے بات کی

    الٹی ہمارے قتل پہ کب آستیں نہیں

    وہ دل اداس ہے کہ جو خالی ہے عشق سے

    ویراں ہے وہ مکان کہ جس میں مکیں نہیں

    بوسہ طلب کیا سر محفل جو یار سے

    بولی حیائے روئے نگاریں نہیں نہیں

    مایوس وصل سے دل غمگیں ہے کس قدر

    ہر چند ہمکنار ہیں وہ پر یقیں نہیں

    آنکھوں میں نور دل میں ضیا سینہ میں صفا

    جلوہ کہاں کہاں ترا اے نازنیں نہیں

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY