کس اجالے کا نشاں ہیں ہم لوگ

فرید جاوید

کس اجالے کا نشاں ہیں ہم لوگ

فرید جاوید

MORE BYفرید جاوید

    کس اجالے کا نشاں ہیں ہم لوگ

    کن اندھیروں میں رواں ہیں ہم لوگ

    نور خورشید کو الزام نہ دو

    صبح کا خواب گراں ہیں ہم لوگ

    جیسے بھٹکا ہوا راہی ہو کوئی

    یوں ہی ہر سو نگراں ہیں ہم لوگ

    کبھی آوارگیٔ نکہت گل

    کبھی زنجیر گراں ہیں ہم لوگ

    دور تک دشت جنوں ہے جاویدؔ

    آبلہ پا گزراں ہیں ہم لوگ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY