کسے مجال جو ٹوکے مری اڑانوں کو

آصف ثاقب

کسے مجال جو ٹوکے مری اڑانوں کو

آصف ثاقب

MORE BYآصف ثاقب

    کسے مجال جو ٹوکے مری اڑانوں کو

    میں خاکسار سمجھتا ہوں آسمانوں کو

    سند خلوص کی مانگے نہ مجھ سے مستقبل

    میں ساتھ لے کے چلا ہوں گئے زمانوں کو

    زمین بک گئی ساری عدو کے پاس مری

    دعائیں دیتا ہوں میں آپ کے لگانوں کو

    نظر کی حد میں سمٹ آئے اجنبی چہرے

    تلاش کرنے جو نکلا میں مہربانوں کو

    سمیٹ لے گئے سب رحمتیں کہاں مہمان

    مکان کاٹتا پھرتا ہے میزبانوں کو

    میں سنگ میل کے ریزے سنبھال لوں ثاقبؔ

    سفر کی لاج سمجھتا ہوں ان نشانوں کو

    مأخذ :
    • کتاب : Funoon (Monthly) (Pg. 310)
    • Author : Ahmad Nadeem Qasmi
    • مطبع : 4 Maklood Road, Lahore (Edition Nov. Dec. 1985,Issue No. 23)
    • اشاعت : Edition Nov. Dec. 1985,Issue No. 23

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY