کسی بہانے سہی دل لہو تو ہونا ہے

منظور ہاشمی

کسی بہانے سہی دل لہو تو ہونا ہے

منظور ہاشمی

MORE BYمنظور ہاشمی

    کسی بہانے سہی دل لہو تو ہونا ہے

    اس امتحاں میں مگر سرخ رو تو ہونا ہے

    ہمارے پاس بشارت ہے سبز موسم کی

    یقیں کی فصل لگائیں نمو تو ہونا ہے

    میں اس کے بارے میں اتنا زیادہ سوچتا ہوں

    کہ ایک روز اسے روبرو تو ہونا ہے

    لہولہان رہیں ہم کہ شاد کام رہیں

    شریک قافلۂ رنگ و بو تو ہونا ہے

    کوئی کہانی کوئی روشنی کوئی صورت

    طلوع میرے افق سے کبھو تو ہونا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY