کسی دشت و در سے گزرنا بھی کیا

عبد الحمید

کسی دشت و در سے گزرنا بھی کیا

عبد الحمید

MORE BYعبد الحمید

    کسی دشت و در سے گزرنا بھی کیا

    ہوئے خاک جب تو بکھرنا بھی کیا

    وہی اک سمندر وہی اک ہوا

    مری شام تیرا سنورنا بھی کیا

    لکیروں کے ہیں کھیل سب زاویے

    ادھر سے ادھر پاؤں دھرنا بھی کیا

    مجھے اوب سی سب سے ہونے لگی

    یہ جینا بھی کیا اور مرنا بھی کیا

    اگر ان سے بچ کر نکل جائیے

    تو پھر اس کی آنکھوں سے ڈرنا بھی کیا

    گھنے جنگلوں کی بجھی کیسے آگ

    کہیں پاس تھا کوئی جھرنا بھی کیا

    کسی طرح سے اس کا گھر تو ملا

    مگر اب ملاقات کرنا بھی کیا

    RECITATIONS

    عبد الحمید

    عبد الحمید,

    عبد الحمید

    کسی دشت و در سے گزرنا بھی کیا عبد الحمید

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے