کسی گل میں نہیں پانے کی تو بوئے وفا ہرگز

تاباں عبد الحی

کسی گل میں نہیں پانے کی تو بوئے وفا ہرگز

تاباں عبد الحی

MORE BYتاباں عبد الحی

    کسی گل میں نہیں پانے کی تو بوئے وفا ہرگز

    عبث اپنا دل اے بلبل چمن میں مت لگا ہرگز

    طبیبوں سے علاج عشق ہوتا ہے نپٹ مشکل

    ہمارے درد کی ان سے نہیں ہونے کی دوا ہرگز

    تجا گھر ایک اور سارے بیاباں کا ہوا وارث

    کوئی مجنوں سا عیارا نہ ہوگا دوسرا ہرگز

    بہار آئی ہے کیوں کر عندلیبیں باغ میں جاویں

    قفس کے در کے تئیں کرتا نہیں صیاد وا ہرگز

    نہ تھے عاشق کسی بیداد پر ہم جب تلک تاباںؔ

    ہمارے دل کے تئیں کچھ درد و غم تب تک نہ تھا ہرگز

    مأخذ :
    • Deewan-e-Taban Rekhta Website)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY