کسی خیال کی شبنم سے نم نہیں ہوتا

شناور اسحاق

کسی خیال کی شبنم سے نم نہیں ہوتا

شناور اسحاق

MORE BYشناور اسحاق

    کسی خیال کی شبنم سے نم نہیں ہوتا

    عجیب درد ہے بڑھتا ہے کم نہیں ہوتا

    میں آ رہا ہوں ابھی چوم کر بدن اس کا

    سنا تھا آگ پہ بوسہ رقم نہیں ہوتا

    تمہارے ساتھ میں چل تو رہا ہوں چلنے کو

    ہر اک ہجوم میں لیکن میں ضم نہیں ہوتا

    میں ایسے خطۂ زرخیز کا مکیں ہوں جہاں

    صنم تراش کو پتھر بہم نہیں ہوتا

    جنہیں یہ ضد ہو کہ چوٹی تلک پہنچنا ہے

    انہیں پہاڑ سے گرنے کا غم نہیں ہوتا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY