کسی کی سانس اکھڑتی جا رہی تھی

آصفہ زمانی

کسی کی سانس اکھڑتی جا رہی تھی

آصفہ زمانی

MORE BYآصفہ زمانی

    کسی کی سانس اکھڑتی جا رہی تھی

    میں لاچاری سے تکتی جا رہی تھی

    جو پھینکی کنکری تھی قبر پر وہ

    دعائے خیر کرتی جا رہی تھی

    ادھر تھا حسن کا انکار پھر بھی

    طلب موسیٰ کی بڑھتی جا رہی تھی

    طواف کعبہ کی ایسی خوشی تھی

    کہ میری سانس رکتی جا رہی تھی

    زمانے کے ستم سہتے ہوئے بھی

    زمانیؔ شوق کرتی جا رہی تھی

    RECITATIONS

    نامعلوم

    نامعلوم

    نامعلوم

    کسی کی سانس اکھڑتی جا رہی تھی نامعلوم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY