کوئی دریا بھی رواں ہے مجھ میں

مرزا اطہر ضیا

کوئی دریا بھی رواں ہے مجھ میں

مرزا اطہر ضیا

MORE BYمرزا اطہر ضیا

    کوئی دریا بھی رواں ہے مجھ میں

    صرف صحرا ہی کہاں ہے مجھ میں

    کیا پتا جانے کہاں آگ لگی

    ہر طرف صرف دھواں ہے مجھ میں

    جشن ہوتا ہے وہاں رات ڈھلے

    وہ جو اک خالی مکاں ہے مجھ میں

    اجنبی ہو گئیں گلیاں میری

    جانے اب کون کہاں ہے مجھ میں

    ایک دن تھا جو کہیں ڈوب گیا

    ایک شب ہے کہ جواں ہے مجھ میں

    تم جسے ڈھونڈ رہے ہو اطہرؔ

    اب وہ انسان کہاں ہے مجھ میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY