کوئی مجبوریاں گنوا رہا ہے

ورل دیسائی

کوئی مجبوریاں گنوا رہا ہے

ورل دیسائی

MORE BYورل دیسائی

    کوئی مجبوریاں گنوا رہا ہے

    مجھے تو خوب ہنسنا آ رہا ہے

    اداسی کر رہی ہے رقص ہجرت

    ہمیشہ کے لیے وہ جا رہا ہے

    کوئی عورت ابھی گھر چھوڑ دے گی

    کوئی جنگل سے واپس آ رہا ہے

    کبھی ہنستے ہوئے جو کہہ دیا تھا

    مرا وہ شعر مجھ کو کھا رہا ہے

    گلے میں پڑ چکی رسی کسی کے

    کنوئیں میں کوئی مرنے جا رہا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY