کچھ نہیں حاصل سپر کو چیر کو یا تلوار توڑ

منیرؔ  شکوہ آبادی

کچھ نہیں حاصل سپر کو چیر کو یا تلوار توڑ

منیرؔ  شکوہ آبادی

MORE BYمنیرؔ  شکوہ آبادی

    کچھ نہیں حاصل سپر کو چیر کو یا تلوار توڑ

    ہے اگر طاقت تو میرے آنسوؤں کا تار توڑ

    تیری چشم و زلف سے سودائے ہم چشمی کیا

    اے صنم بادام چشم آہوئے تاتار توڑ

    زلف میں موتی پرونا میرے حق میں زہر ہے

    آج اے مشاطۂ دنداں دہان یار توڑ

    سلسلہ گبر و مسلماں کی عداوت کا مٹا

    اے پری بے پردہ ہو کر سبحہ و زنار توڑ

    کبر بھی ہے شرک اے زاہد موحد کے حضور

    لے کے تیشہ خاکساری کا بت پندار توڑ

    آب گوہر سے بدن کی آب ہوتی ہے خراب

    بوجھ ہے اے نازنیں یہ موتیوں کا ہار توڑ

    شرم کب تک اے پری لا ہاتھ کر اقرار وصل

    اپنے دل کو سخت کر کے رشتۂ انکار توڑ

    صبر کب تک راہ پیدا ہو کہ اے دل جان جائے

    ایک ٹکر مار کر سر پھوڑ یا دیوار توڑ

    اے زلیخا نقد جاں ہم دیں لگا تو گنج زر

    قیمت یوسف کا ہو جائے سر بازار توڑ

    وصف چشم یار لکھنے کے لئے اے دست شوق

    چل کسی گلشن میں شاخ نرگس بیمار توڑ

    چڑھ کے کوٹھے پر دکھا دے اپنے ابرو میں شکن

    اے پری پیکر ہلاک چرخ کی تلوار توڑ

    آئنہ ہے مانع نظارۂ حسن و جمال

    ہو سکے تو سد اسکندر کو اے دل دار توڑ

    مانع مستی کو بد مستی دکھانا چاہئے

    محتسب کا شیشۂ دل اے بت مے خوار توڑ

    حسن پیشانی سے قصر چرخ کو برباد کر

    لوح قرآں سے طلسم گنبد دوار توڑ

    نام کو اے دل نہ رکھ اسباب اصلاح جنوں

    وادئ وحشت میں چل کر نشتر ہر خار توڑ

    آنکھیں پھوڑ اس کی جو دیکھے بے اجازت منہ ترا

    شوق سے اے مست جام شربت دیدار توڑ

    عشق زلف عنبر افشاں کا نہ ٹوٹے سلسلہ

    پاؤں کی زنجیر اے دست جنوں سو بار توڑ

    سائل بوسہ ہیں ان کو دیکھ چشم قہر سے

    آنکھ کے ڈھیلوں سے اے بت خاطر اغیار توڑ

    حِصن غم میں ایک مدت سے مقید ہے منیرؔ

    فکر دنیا کا حصار اے حیدر کرار توڑ

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY