کرۂ ارض کو تاریک بنا دینا تھا

رفیق راز

کرۂ ارض کو تاریک بنا دینا تھا

رفیق راز

MORE BYرفیق راز

    کرۂ ارض کو تاریک بنا دینا تھا

    ہجر کی شب میں ستاروں کو بجھا دینا تھا

    کتنی دہشت ہے مرے شہر میں سناٹے کی

    نخل آواز یہاں بھی تو لگا دینا تھا

    تو کہ موجود اگر مثل ہوا صحن میں تھا

    شجر جامد و ساکت کو ہلا دینا تھا

    پر سکوں کب سے مرے دل کا ہے صحرائے سکوت

    آ کے اس میں بھی کبھی حشر اٹھا دینا تھا

    حسن کے منظر سفاک نظر آتے صاف

    پردۂ خواب کو آنکھوں سے ہٹا دینا تھا

    رنگ کچھ صبح قیامت کا الگ ہی ہوتا

    چہرۂ مہر سے بھی رنگ اڑا دینا تھا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے