کیا فقط طالب دیدار تھا موسیٰ تیرا

شاد عظیم آبادی

کیا فقط طالب دیدار تھا موسیٰ تیرا

شاد عظیم آبادی

MORE BYشاد عظیم آبادی

    کیا فقط طالب دیدار تھا موسیٰ تیرا

    وہی شیدا تھا ترا میں نہیں شیدا تیرا

    دیدۂ شوق سے بے وجہ ہے پردا تیرا

    کس نے دیکھا نہیں ان آنکھوں سے جلوا تیرا

    خود نزاکت پہ نہ کیوں بوجھ ہو پردا تیرا

    کیا کسی آنکھ نے دیکھا نہیں جلوا تیرا

    مٹ گئی شورش طوفان حوادث اے موج

    اب وہی تو وہی بہتا ہوا دریا تیرا

    چین سے شہر خموشاں میں ہر اک سوتا ہے

    آسرا سب کو ہے اے وعدۂ فردا تیرا

    منزلت ایک کی بھی ہوگی نہ ویسی بہ خدا

    حشر میں آئے گا جس شان سے رسوا تیرا

    زندگی کہتی ہے ارماں کوئی اب ہے نہ امید

    کب تلک ساتھ کروں میں تن تنہا تیرا

    بے سبب میری خموشی نہیں اے شاہد حسن

    دامن صبر سے ڈھنکتا نہیں پردا تیرا

    یوں حبابوں کا نہ دل توڑ خدارا اے موج

    انہیں قطروں کے تو ملنے سے ہے دریا تیرا

    وہی رنگت وہی خوشبو وہی نازک بدنی

    پھول نے نقش اتارا ہے سراپا تیرا

    تجھ سے ملنے کا جو ہے شوق تو در در نہ پھرے

    پانو توڑے ہوئے بیٹھا رہے شیدا تیرا

    اے گل آتی ہے خزاں باغ میں ٹھہرا نہ مجھے

    دیکھوں ان آنکھوں سے اترا ہوا چہرا تیرا

    کاش زاہد رخ روشن سے اٹھا لیں وہ نقاب

    پھر تو کچھ رند کی رندی ہے نہ تقویٰ تیرا

    اپنے مے خانے سے گھبرا کے میں باہر آیا

    جب حرم سے کوئی نکلا نہ شناسا تیرا

    اس پہ کیا زور بھلا جس پہ ہو اس کا قابو

    چشم شوق اپنی سہی دل تو ہے شیدا تیرا

    جستجو شرط ہے مل جائے گا زینہ بھی ضرور

    سامنے ہے نظر شوق کے مکھڑا تیرا

    وسعت قدرت حق ہوگی نہ محدود کبھی

    نہیں ملنے کا سرا زلف چلیپا تیرا

    بزم آخر ہے تقاضہ نہ کر اے محفل شوق

    اب کہاں صاف بھلا ساغر و صہبا تیرا

    شادؔ غزلیں نہیں آیات زبور ان کو سمجھ

    لحن داؤد سے کچھ کم نہیں نغما تیرا

    اب جوانی کی امنگیں نہ امنگوں کی خوشی

    شادؔ کو ہے فقط اے موج سہارا تیرا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY