کیا غضب ہے کہ ملاقات کا امکاں بھی نہیں

رام کرشن مضطر

کیا غضب ہے کہ ملاقات کا امکاں بھی نہیں

رام کرشن مضطر

MORE BYرام کرشن مضطر

    کیا غضب ہے کہ ملاقات کا امکاں بھی نہیں

    اور اب اس کو بھلانا کوئی آساں بھی نہیں

    کسے دیکھوں کسے آنکھوں سے لگاؤں اے دل

    روئے تاباں بھی نہیں زلف پریشاں بھی نہیں

    اور ہیں آج ٹھکانے ترے دیوانوں کے

    کوہ و صحرا بھی نہیں دشت و بیاباں بھی نہیں

    جانے کیا بات ہے سب اہل جنوں ہیں خاموش

    آج وہ سلسلۂ چاک گریباں بھی نہیں

    غم پنہاں نظر آتا ہے مجھے دشمن جاں

    ہائے یہ درد کہ جس کا کوئی درماں بھی نہیں

    کون جانے مرا انجام سحر تک کیا ہو

    آج کوئی دل بیمار کا پرساں بھی نہیں

    ہائے یہ گھر کہ اب اس میں نہیں بستا کوئی

    حیف یہ دل کہ اب اس میں کوئی ارماں بھی نہیں

    اف یہ تنہائی یہ وحشت یہ سکوت شب تار

    اور شبستاں میں کوئی شمع فروزاں بھی نہیں

    ساتھ اس گل کے گیا دل سے گلستاں کا خیال

    اب مجھے آرزوئے فصل بہاراں بھی نہیں

    مآخذ
    • Raqs-e-bahar

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY