کیا ہوئے آشفتہ کاراں کیا ہوئے

جون ایلیا

کیا ہوئے آشفتہ کاراں کیا ہوئے

جون ایلیا

MORE BY جون ایلیا

    کیا ہوئے آشفتہ کاراں کیا ہوئے

    یاد یاراں یار یاراں کیا ہوئے

    اب تو اپنوں میں سے کوئی بھی نہیں

    وہ پریشاں روزگاراں کیا ہوئے

    سو رہا ہے شام ہی سے شہر دل

    شہر کے شب زندہ داراں کیا ہوئے

    اس کی چشم نیم وا سے پوچھیو

    وہ ترے مژگاں شماراں کیا ہوئے

    اے بہار انتظار فصل گل

    وہ گریباں تار تاراں کیا ہوئے

    کیا ہوئے صورت نگاراں خواب کے

    خواب کے صورت نگاراں کیا ہوئے

    یاد اس کی ہو گئی ہے بے اماں

    یاد کے بے یادگاراں کیا ہوئے

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY