کیا جانیے منزل ہے کہاں جاتے ہیں کس سمت (ردیف .. ن)

شکیب جلالی

کیا جانیے منزل ہے کہاں جاتے ہیں کس سمت (ردیف .. ن)

شکیب جلالی

MORE BYشکیب جلالی

    کیا جانیے منزل ہے کہاں جاتے ہیں کس سمت

    بھٹکی ہوئی اس بھیڑ میں سب سوچ رہے ہیں

    بھیگی ہوئی اک شام کی دہلیز پہ بیٹھے

    ہم دل کے سلگنے کا سبب سوچ رہے ہیں

    ٹوٹے ہوئے پتوں سے درختوں کا تعلق

    ہم دور کھڑے کنج طرب سوچ رہے ہیں

    بجھتی ہوئی شمعوں کا دھواں ہے سر محفل

    کیا رنگ جمے آخر شب سوچ رہے ہیں

    اس لہر کے پیچھے بھی رواں ہیں نئی لہریں

    پہلے نہیں سوچا تھا جو اب سوچ رہے ہیں

    ہم ابھرے بھی ڈوبے بھی سیاہی کے بھنور میں

    ہم سوئے نہیں شب ہمہ شب سوچ رہے ہیں

    مأخذ :
    • کتاب : auraq salnama magazines (Pg. 498)
    • Author : Wazir Agha,Arif Abdul Mateen
    • مطبع : Daftar Mahnama Auraq Lahore (1967 )
    • اشاعت : 1967

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY