کیا کہوں مجھ پہ جو اے دشمن جاں گزری ہے

کنول ایم۔اے

کیا کہوں مجھ پہ جو اے دشمن جاں گزری ہے

کنول ایم۔اے

MORE BYکنول ایم۔اے

    کیا کہوں مجھ پہ جو اے دشمن جاں گزری ہے

    تری ہر بات طبیعت پہ گراں گزری ہے

    کچھ نہ سمجھے گا تو بیتابیٔ دل کا عالم

    یہ مصیبت کی گھڑی تجھ پہ کہاں گزری ہے

    نونہالان چمن بھی خس و خاشاک ہوئے

    خاک اڑاتی ہوئی یوں باد خزاں گزری ہے

    زندگی نغمۂ بے ساز و نوا تھی پہلے

    آج تک خیر سے اے درد نہاں گزری ہے

    جادۂ شوق میں یہ بھی مجھے معلوم نہیں

    دن کہاں بیت گیا رات کہاں گزری ہے

    زیست وہ کیا ہے جو موہوم سی امید لیے

    موت کی راہ سے بے نام و نشاں گزری ہے

    دیکھیے رنگ جماتی ہے بہار اب کیوں کر

    لوٹ کر حسن گلستاں کو خزاں گزری ہے

    جرأت عرض تمنا مجھے کیوں کر ہو کنولؔ

    خاطر حسن پہ ہر بات گراں گزری ہے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY